41

وقت سے پہلے لڑکیوں کے جوان ہونے کی وجوہات

اسلام آباد(احتساب نیوز) عشروں کے مقابلے میں اب بچے وقت سے پہلے سنِ بلوغت کو پہنچ رہے ہیں۔پہلے گیارہ سے بارہ سال کی عمر لڑکےاور لڑکیوں کی اوسط سنِ بلوغت شمار ہوتی تھی۔لیکن اب یہ رفتارِ بلوغت تیز ہوکر نواور دس سال تک آپہنچی ہے۔کم عمری میں بلوغت کی تبدیلیاںاکثر بچوں اور بچیوں کے لئے پیچیدہ اور جذباتی الجھن کاسبب بنتی ہے۔بظاہر یہ ایک سے دو سال کافرق اتنا اہم نہیں لگتا لیکن صحت کے اعتبار سےیہ تبدیلی بچوں پر دوررس اثرات مرتب کرسکتی ہے۔ماہرین کے مطابق اسکا سبب افزائشی ہارمون ہیں، جوزیادہ انڈے،گوشت اوردودھ حاصل کرنے کے لئے مرغیوں اور گائے ،بھینسوں کے جسم میں پہنچائے جاتے ہیں۔انھیں کھانے سے کم عمر بچوں اور بچیوں کے غدودی نظام وقت سے پہلے سرگرم ہوکر انھیں بلوغت کے دور میں جلدی داخل کردیتے ہیں۔زیادہ پیداوار کی حوص میں ان میں بھی ایسے ہارمون داخل کئے جارہے ہیں جنکے مضر اثرات بڑھتے بچوں کو بھگتنے پڑرہے ہیں۔دیگر اہم وجوہات میں موٹاپا اور جسم میں واقع ہارمونز کی تیاری کی تعداد وتوازن کافرق نمایاں ہے۔ ساتھ ساتھ ماحول میں شامل کئی کیمیائی اجزا بھی اثر انداز ہوتے ہیں۔یہ وہ کیمیائی اجزا ہیں جوخصوصا لڑکوں کے ہارمونی غدود پر قبل از وقت اثر انداز ہوتے ہیں۔اسکے علاوہ غذائی، جینیاتی،نسلی،سماجی ومعاشی اسباب بھی وقت سے پہلے سنِ بلوغت کاسبب بن سکتے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں